پاکستان میں ATM مشینیں ہیکرزکے نشانہ پر

Download PDF

pakistani-atms-under-cyberattack
کراچی: آجکل بنک صارفین کافی پریشانی اور تکلیف سے گزررہے ہیں کیونکہ ملک بھر میں ATM استعمال کرنے والے صارفین کی طرف سے شکایات موصول ہورہی ہیں کہ ان کی مرضی کے بغیران کے اکاؤنٹ سے پیسے نکال لیے گئے یا ان کا کارڈ بلاک ہوگیا. ان واقعات کی ذمہ داری ہیکرزپرڈالی جا رہی ہے.

فیڈرل انوسٹیگیشن ایجنسی کے سائبرکرائم ونگ حبیب بنک لمیٹڈ کی شکایت پران بنک اکاؤنٹس کے ہیک ہونے کی تفتیش کا آغازکردیا ہے. حبیب بنک نے تصدیق کی ہے کہ ان کے تقریباً 600 صارفین اس مسئلہ سے متاثرہوئے ہیں اوراب تک 1 کروڑ روپے کا نقصان بھی ہوچکا ہے.

ایف آئی اے کے ایک اہلکارنے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا “کراچی کے علاقے خیابانِ اتحاد میں‌ نصب ایک ATM مشین ہیکرزکا نشانہ تھی”.

اس کے علاوہ ڈولمن مال کراچی سے بھی اس سے ملتی جلتی شکایات سامنے آئی ہیں جبکہ اسلام آباد میں بھی اسی طرح کے سائبرحملوں کی اطلاع ہے. حبیب بنک لمیٹد سمیت تمام بنکوں نے مزید کسی نقصان سے بچنے کے لیے ایسے صارفین کے ATM
کارڈ بلاک کردیے ہیں جوہیکنگ کا شکارتھے.

پچھلے ہفتہ جعلی ٹرانزیکشن کی بھی اطلاعات منظرعام پرآئی ہیں جوکہ ATM مشینوں سے صارفین کا کنسیومرڈیٹا چرانے کے بعد عمل میں لائی گئی تھیں.

حبیب بنک لمیٹڈ کے چیف مارکیٹنگ آفیسر نوید اصغرنے تصدیق کی ہے کہ تقریباً 579 صارفین اس سائبرحملے سے متاثرہوئے ہیں اوراس مقصد کے لیے 10 ATM مشینیں استعمال کی گئی ہیں. متاثرہ صارفین کا تقریباً 1 کروڑروپے کا نقصان ہوا ہے جوبنک انہیں‌ واپس ادا کرے گا.

نوید اصغرنے کہا “ہم ہیکنگ کے واقعات کی تفتیش کررہے ہیں اورجن جن صارفین کا نقصان ہوا ہے ان سب کوان کے پیسے واپس دیے جائیں گے. تمام ATM مشینو‌ں کی پھرسے جانچ پڑتال کرنے کے بعد تسلی کی گئی ہے کہ کوئی مسئلہ باقی نہ رہے. ہم اپنے صارفین کو یقین دہانی کروارہے ہیں کہ پریشان ہونے کی کوئی ضرورت نہیں ہے”.

اپنا تبصرہ بھیجیں