کوئٹہ میں خودکش حملہ میں 6 افراد جاں بحق

quetta-suicide-attack-kills-six (3)
کوئٹہ: بلوچستان اسمبلی کے قریب سیکیورٹی فورسز کی ایک بس پرخودکش حملہ کے نتیجے میں پانچ پولیس اہلکاروں سمیت 6 افراد شہید ہوگئے ہیں جبکہ 25 کے قریب افراد زخمی ہوگئے ہیں.

کالعدم تنظیم تحریکِ طالبان پاکستان نے اس حملہ کی ذمہ داری قبول کرلی ہے، یہ حملہ کوئٹہ میں موجود زرغون روڈ کے قریب کیا گیا اوربلوچستان اسمبلی یہاں سے صرف 300 میٹرکے فاصلے پرہے. تحریکِ طالبان پاکستان کے ترجمان محمد خراسانی کا کہنا ہے “یہ حملہ سیکیورٹی فورسزکی جانب سے ہمارے ساتھیوں کوہلاک کرنے کا بدلہ ہے”.

ایک سینئرطبی اہلکارشاہجہان پانی زئی نے الجزیرہ سے بات کرتے ہوئے 6 افراد کے ہلاک ہونے کی تصدیق کی ہے جبکہ اس کے علاوہ دھماکہ کے نیجے میں 16 افراد زخمی بھی ہوئے ہیں. سیکیورٹی فورسز کا کہنا ہے کہ حملہ آورپیدل آیا اوروہ اسمبلی کی جانب چاہتا تھا. لیکن اسمبلی کی جانب جانے والی سڑکین بند ہونے کی وجہ سےاس نے خود کو سیکیورٹی فورسز کی ایک بس کے قریب دھماکے سےاڑا لیا.

کوئٹہ میں حال ہی میں دہشت گردی کی ایک نئی لہراٹھی ہے اوریہ شہرتحریکِ طالبان پاکستان اورعلیحدگی پسند گروہوں کے حملوں کی زد میں ہے. پچھلے ماہ کوئٹہ کے ایک چرچ میں خودکش حملہ اورفائرنگ کے نتیجہ میں 8 افراد جاں بحق ہوگئے تھے. اس حملے کا نشانہ بیتھل میموریل میتھڈسٹ چرچ تھا جہاں لوگ اتوارکی سروس میں شریک ہونے آئے تھے.

پچھلے سال نومبرمیں ایسے ہی ایک حملہ میں ایک سینئرپولیس اہلکارکوشہید کردیا گیا تھا جبکہ اکتوبرکے مہینے میں کم از کم سڑک کنارے نصب بم کے پھٹنے کے نتیجے میں 7 پولیس اہلکارہلاک ہوگئے تھے.

شئیرکرکے اپنے دوستوں تک پہنچائیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں