ڈونلڈ ٹرمپ نے ایران سے جوہری معاہدے کی آخری بار توثیق کردی

Donald-J-Trump-45th-President-United-States-America
واشنگٹن: امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے وقتی طورپرایران سے 2015ء میں ہونے والے تاریخی جوہری معاہدے کی مخالفت روک دی ہے اورایک آخری باراس معاہدے کی توثیق کردی ہے.

وائٹ ہاؤس کی جانب سے جمع کے روز ایک بیان جاری کیا گیا جس میں کہا گیا ڈونلڈ ٹرمپ “آخری بار” ایران سے جوہری معاہدے کی توثیق کریں گے. اس بیان میں امریکی صدر کی جانب سے کہا گیا “حالانکہ میں اس معاہدے کے سخت خلاف ہوں لیکن میں ابھی تک امریکہ ایران جوہری معاہدے کوختم نہیں کیا ہے”.

امریکی صدر نے مزید کہا “میں تیسری اور آخری مرتبہ ایران کو پابندیوں پر چھوٹ دے رہے ہیں تا کہ امریکا اور اس کے یورپی اتحادی 120 روز میں ایران کے ساتھ موجودہ جوہری معاہدے میں پائے جانے والے سنگین نقائص کو دور کر سکیں، اگر ایسا نہ ہوا تو وہ فوری طور پر موجودہ معاہدے سے الگ ہوجائیں گے”۔

ایران کے وزیرخارجہ محمد جواد ظریف نے امریکی صدر کے بیان کے جواب میں کہا ہے کہ یہ ایک ٹھوس معاہدے کوخراب کرنےکی کوشش ہے. محمد جواب ظریف برسلز میں برطانیہ، فرانس، جرمنی اوریورپی یونین کے وزرائے خارجہ سے ملاقات کی ہے، اس ملاقات کے بعد مشترکہ پریس کانفرنس کے دوران امریکہ کے علاوہ تمام فریقین نے معاہدے کوجاری رکھنے کا اعادہ کیا تھا.

اپنا تبصرہ بھیجیں