شام پردوبارہ حملہ عالمی افراتفری پیدا کردے گا، روسی صدرکی دھمکی

putin-warns-chaos
ماسکو: روسی صدرولادمیرپوٹن نے خبردارکیا ہے کہ اگرمغربی طاقتوں نے دوبارہ شام پرحملہ کیا تواس کا نتیجہ عالمی افراتفری کی صورت میں نکلے گا، جبکہ دوسری طرف امریکہ روس پرنئی معاشی پابندیاں لگا کرمزید دباؤ ڈالنے کی تیاری کررہا ہے.

روسی حکومت کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان کے مطابق روسی صدرکی اپنے ایرانی ہم منصب حسن روحانی سے ٹیلی فون پربات چیت کے دوران دونوں رہنماؤں نے اس بات پراتفاق کیا ہے کہ مغربی طاقتوں کے حملے کی وجہ سے شام کی سات سالہ خانہ جنگی کے سیاسی حل کے مواقع مزید معدوم ہوگئے ہیں.

اس بیان کے مطابق “ولادمیرپوٹن نے خاص طورپرکہا ہے کہ اگراقوام متحدہ کے چارٹرکی خلاف ورزی کرتے ہوئے اس طرح‌ کے مزید حملے جاری رہے تو اس کے نیتجے میں بین الاقوامی تعلقات یقیناً افراتفری کا شکار ہوجائیں گے.”.

اقوام متحدہ میں تعینات امریکی سفیر نکی ہیلی نے نشریاتی ادارے سی بی ایس سے بات کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ پیرکے روزنئی معاشی پابندیوں کا اعلان کرے گا اوران پابندیوں کا اطلاق ان کمپنیوں پرہوگا جوبشارالاسد کوایسا سازوسامن فراہم کرتی ہیں جن کی مدد سے کیمیائی ہتھیارتیارکیے جاتے ہیں.

اتوارکے روز امریکہ، برطانیہ اورفرانس نے شام کی تین مبینہ کیمیائی ہتھیارتیارکرنے والی تین تنصیبات پر105 میزائل فائرکیے. پنٹاگون
کے مطابق یہ حملہ 7 اپریل کوڈوما میں کیے جانے والے کیمیائی حملے کے ردعمل میں کیا گیا ہے. مغربی طاقتیں اس کیمیائی حملے کا ذمہ دارشامی صدر بشارلاسد کوٹھہرا رہی ہیں جبکہ شامی حکومت اوراس کے اتحادی روس نے ایسے کسی بھی حملے میں ملوث ہونے سے انکارکیا ہے.

اپنا تبصرہ بھیجیں