south-carolina-jail-riots-seven-inmates-dead

امریکی جیل میں‌ فساد، 7 قیدی جاں بحق اور17 زخمی

south-carolina-jail-riots-seven-inmates-dead
بشپ ول: امریکی ریاست جنوبی کیرولینا کی ایک جیل میں مختلف گروہوں کے مابین فسادات کے نتیجہ میں کم ازکم 7 قیدی ہلاک ہوگئے ہیں جبکہ 17 سے زائد اقیدی زخمی ہوگئے ہیں، امریکی جیلوں میں اس سے پہلے اتنے مہلک فسادات کبھی برپا نہیں ہوئے.

جنوبی کیرولینا کے گورنرہنری مکماسٹرکا کہنا تھا کہ بشپ ول جنوبی کیرولینا میں واقع لی کریکشنکل انسٹیٹیوشن میں ہونے والے یہ فسادات ہماری بدقسمتی ہیں اورفساد برپا کرنے والے افراد بہت ہی خطرناک لوگ ہیں. گورنرکا کہنا تھا “ان قیدیوں سے یہ توقع نہیں کی جا سکتی کہ جیل میں ہونے کی وجہ سے وہ اپنے پرتشدد طورطریقے چھوڑدیں گے”.

برائن سٹرلنگ جوکہ جنوبی کیرولینا کے ڈیپارٹمنٹ آف کریکشنزکے سربراہ ہیں کا کہنا ہے فسادات کا آغاز اتوارکی صبح سات بجے کے قریب ہوا، فساد جیل کے ایک حصے میں شروع ہوئے دیکھتے ہی دیکھتے دواورحصوں میں پھیل گئے. حالات پرقابوپانے میں تقریباً آٹھ گھنٹے لگ گئے. برائن سٹرلنگ کے مطابق قیدیوں کے گروہوں میں لڑائی کی وجوہات میں موبائل فون جیسی ممنوعہ مصنوعات کا حصول اورعلاقے پرکنٹرول حاصل کرنا شامل ہیں.

جنوبی کیرولینا کے گورنر اوربرائن سڑلنگ نے فیڈرل کمیونیکیشن کمشن سے اپیل کی ہے کہ انہیں جیلوں میں موبائل فون کے سگنلزبلاک کرنے کی اجازت دی جائے تاکہ قیدیوں کا باہرکی دنیا سے رابطہ منقطع کیا جا سکے. گورنرمکماسٹرکا کہنا ہے “موبائل فونز کے سگنل بلاک کرنے سے بہت ہی مدد ملے گی. یہ صرف جنوبی کیرولینا کا ہی مسئلہ نہیں‌ ہے بلکہ یہ ایک قومی مسئلہ بن چکا ہے”.

برائن سٹرلنگ کے مطابق فسادات پھوٹنے کے وقت جیل میں 1600 قیدی موجود تھے جبکہ ان پرقابورکھنے والے گارڈز کی تعداد صرف 44 تھی، پہلی رسپانس ٹیم ساڑھے گیارہ بجے جیل میں داخل ہوئی، دوسری ٹیم ساڑھے بارہ بجے اورپھرتیسری ٹیم دو بجے جیل میں داخل ہوئی. قیدیوں نے کسی مزاحمت نہیں کی اوررسپانس ٹیموں نے جیل کا کنٹرول واپس حاصل کرلیا.

اپنا تبصرہ بھیجیں