انٹرنیٹ قدیم بھارت کی ایجاد ہے، بھارتی وزیر

internet-existed-ancient-india
بھارت کے ایک وزیران دنوں اپنے ایک بیان کی وجہ سے مذاق اورتضحیک کا نشانہ بنے ہوئے کیونکہ ان کا دعویٰ ہے کہ انٹرنیٹ ہزاروں سال پہلے قدیم بھارت میں ایجاد کیا گیا تھا.

یہ بیان بپلاپ دیب کا ہے جوکہ بھارت کی شمال مشرقی ریاست تری پوراکے وزیرِاعلیٰ ہیں. انہوں نے اپنے دعوے کے ثبوت کے طورپرمہابھارت کی مثال بھی دی لیکن لوگ اس پریقین کرنے کوتیارنہیں ہیں. بپلاپ دیب ایسے پہلے بھارتی وزیرنہیں ہیں جن کے خیال میں جدید دورکی سائنسی اورتکنیکی ایجادات کئی صدیاں پہلے ہی حاصل کی جا چکی ہیں، وزیراعظم نریندرمودی اوربھارتی جنتا پارٹی کے کئی اوروزراء بھی ایسا ہی سوچتے ہیں.

2014ء میں ممبئی کے ایک ہسپتال میں نریندرمودی نے ڈاکٹرزاورمیڈیکل سٹاف کے ایک اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا قدیم بھارتی کاسمیٹک سرجری کیا کرتے تھے. اس کے علاوہ جونیئروزیرتعلیم ستیاپال سنگھ نے دعویٰ کیا تھا کہ ہوائی جہاز کا زکرسب سے پہلے رامائن میں کیا گیا تھا.

سوشل میڈیا پرایسے دعوے سخت تنقید کا نشانہ بنائے جا رہے ہیں.

بپلاب دیب کا کہنا ہے کہ مہابھارت میں کرکشیترکی جنگ کا زکرہے جس سے ثابت ہوتا ہے کہ قدیم بھارت میں نہ صرف انٹرنیٹ موجود تھا بلکہ سیٹلائٹ ٹیکنالوجی بھی موجود تھی. ان کا کہنا تھا کہ مہابھارت کا کردار سنجے میلوں دوربیٹھ کراپنے بادشاہ دھریتاراشٹرا کومیدان جنگ کی مکمل تفصیل بیان کرتا رہا جس سے ثابت ہوتا ہےکہ قدیم بھارت میں یہ دونوں ٹیکنالوجیز موجود تھیں.

اس بیان کوسوشل میڈیا پربھرپورمذاق کا نشانہ بنایا جا رہا ہے.

شئیرکرکے اپنے دوستوں تک پہنچائیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں