افغانستان: طالبان کے حملوں میں سیکیورٹی فورسز کے 37 اہلکار ہلاک

کابل: افغانستان میں طالبان کے مختلف حملے میں سیکیورٹی فورسز کے تقریباً 37 اہلکاروں کو ہلاک ہوگئے۔

صوبہ کندز کے صوبائی کونسل کے سربراہ محمد یوسف کے مطابق طالبان نے ضلع دشتی آرچی میں چیک پوسٹ کے پاس سیکیورٹی اہلکاروں کو نشانہ بنایا جس میں تقریباً 13 ہلاک اور 15 اہلکار زخمی ہوئے۔

اس حوالے سے انہوں نے مزید بتایا کہ اتوار کی شب شروع ہونے والی لڑائی پیر کی صبح تک جاری رہی۔

اس دوران صوبائی پولیس چیف جنرل فقیر محمد جوزجان نے بتایا کہ صوبہ جوزجان میں طالبان نے ضلع کامیاب کے مختلف مقامات پر افغان سیکیورٹی فورسز پر حملے کیے تاکہ وہ ضلع سے پسپاہی اختیار کر سکیں۔

دوسری جانب طالبان کے ترجمان ذبیع اللہ مجاہد نے کندز اور جوزجان میں حملوں کی ذمہد اری قبول کرلی۔

اس حوالے سےانہوں نے مزید بتایا کہ طالبان نے صوبہ سمنگان میں مقامی افغان پولیس کے 14 اہلکاروں کو نشانہ بنایا گیا۔

صوبائی ترجمان صادق عزیزی نے بتایا کہ طالبان کے حملوں میں 6 اہلکار بھی زخمی ہوئے۔

سمنگان میں حملے کی ذمہ داری کسی نے قبول نہیں کیا تاہم صادق عزیزی نے دعویٰ کیا کہ طالبان صوبے میں متحرک ہیں اور انہوں نے ہی افغان سیکیورٹی فورسز کو نشانہ بنایا۔

دوسری جانب سری پال صوبے میں صوبائی پولیس چیف جنرل عبدالقیوم نے بتایا کہ چیک پوسٹ پر طالبان کے حملے میں حکومت کے حماتی یافتہ مسلح ہلاک ہو ئے اور 2 زخمی ہوئے۔

انہوں نے ہلاک ہونے والوں کی تعداد نہیں بتائی۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ طالبان کے حملے کا جواب دیا گیا تاہم شہر کے باہر ہلکی پھلکی لڑائی تاحال جاری ہے۔

طالبان نے سری پال صوبے میں لڑائی سے متعلق تصدیق نہیں کی۔

شئیرکرکے اپنے دوستوں تک پہنچائیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں