مصر کا گائوں جہاں مجرموں کو زندہ جلایا جاتا ہے

مصر کی اسماعیلیہ گورنری میں مقامی قبائل کے ہاں ایک مجرموں کو سزا دینے کا ایک وحشیانہ طریقہ رائج ہے۔ اس طریقے کے مطابق کسی جرم کے مرتکب شخص کو جرم ثابت ہونے پر مجمع عام میں زندہ جلادیا جاتا ہے۔

حیران کن بات یہ ہے کہ انتہائی سنگین اور وحشیانہ سزا ہونے کے باوجود لوگ اس قبائلی عدالت سے رجوع کرتے ہیں۔ وہاں جانے والے نہ صرف مصر شہری ہوتے ہیں بلکہ غیر ملکی بھی اپنی شکایات وہاں لے جاتے ہیں۔

یہ سلسلہ صدیوں سے رائج ہے۔ مشتبہ ملزم کو وہاں‌پر لانے کے بعد لوہے کی ایک سلاخ کو 15 منٹ تک آگ میں گرم کرنے کے اس کی زبان پر تین بار رکھی جاتی ہے۔ اگر وہ بے قصور ہو تو اس کی زبان کو کوئی تکلیف نہیں پہنچتی اور گرم سلاخ نقصان نہیں پہنچاتی اور اگر وہ قصور وار ہو تو اس کی زبان جل جاتی ہے۔ اس کے بعد اسے دیگر لوگوں کے سامنے بھڑکتے الائو میں پھینک کر جلا دیا جاتا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ٹیم کی موجودگی میں دو ملزمان کے کیسز نمٹائے گئے۔ پہلے کیس میں ایک شخص نے دوسرے پر 5 ہزار مصری پائونڈ چوری کرنے کا الزام عاید کیا۔ معمول کے مطابق ملزم کی زبان پر گرم سلاخ رکھی گئی مگر اسے کوئی تکلیف نہیں پہنچی جس پر اسے بے قصور قرار دیا گیا۔ چوری کا الزام لگانے والے نے اس سے معافی مانگی۔ ایسا ہی ایک دوسرا کیس بھی چوری ہی کا تھا جس میں ملزم قصور وار قرار دیا گیا اور اسے ظالمانہ سزا دے کر جان سے مار دیا گیا۔

ایک مقامی قبائلی رہ نما الشیخ فضل العبادی نے کہا کہ سنگین سزا بہت پرانا، قبائلی اور نسل در نسل چلنے والا طریقہ ہے۔ کئی سو سال قبل ان کی نسل کے ایک بزرگ نے یہ سلسلہ شروع کیا۔ ان کا اونٹ چوری ہوگیا تھا۔ انہیں اپنے دو ملازمین پر اونٹ چوری کرنے کا شک تھا مگر دونوں نے چوری کی تردید کی تھی۔ ایک رات خواب میں ان بزرگ کو بتایا گیا کہ مشکوک شخص کی زبان پر گرم سلاخ رکھیں اگر وہ نقصان پہنچائے تو ملزم قصور وار ہے اور محفوظ رہے تو بے قصور ہوگا۔ انہوں نے ایسا ہی کیا۔ اس کے بعد یہ سلسلہ چل پڑا جو آج تک جاری ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں