امریکا اور ایران کے درمیان مسقط میں خفیہ مذاکرات کا انکشاف

ایران کے ایک سرکردہ عہدیدار نے انکشاف کیا کہ تہران اور واشنگٹن کے درمیان خلیجی ریاست اومان میں خفیہ مذاکرات جاری ہیں۔

ایرانی پارلیمنٹ کی خارجہ قومی سلامتی کمیٹی کے رکن جواد کریمی قدوسی نے بتایا کہ ایرانی وزارت خارجہ کے عہدیدار امریکی انتظامیہ کے ساتھ مسقط میں مذاکرات کر رہے ہیں۔

خبر رساں ایجنسی “موج” سے بات کرتے ہوئے کریمی قدوسی کا کہنا تھا کہ مسقط میں امریکا اور ایران کے درمیان خفیہ مذاکرات کی خبریں مصدقہ ہیں، تاہم ساتھ ہی انہوں‌ نے الزم عاید کیا کہ وزیر خارجہ محمد جواد ظریف امریکی صدر دونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ کے ساتھ رابطوں کی کوشش کر رہے ہیں۔

ایران کے سخت گیر رہ نما کا کہنا تھا کہ سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای کی امریکا سے مذاکرات کی سخت مخالفت کے علی الرغم وزارت خارجہ کے عہدیدار اپنے امریکی ہم منصب عہدیداروں کے ساتھ مذاکرات کر رہے ہیں۔

قدوسی کا کہنا تھا کہ مسقط میں جاری خفیہ مذاکرات سپریم لیڈر کے احکامات کی صریح خلاف ورزی ہیں۔ آیت اللہ علی خامنہ ای تہران کو امریکا کے ساتھ کسی بھی سطح پر مذاکرات سے سختی سے منع کر چکے ہیں۔

خیال رہے کہ ایرانی سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای نے 4 اکتوبر کو باسیج ملیشیا کے ایک اجلاس سے خطاب میں کہا تھا کہ امریکا کے ساتھ کسی بھی قسم کے مذاکرات نہیں کیے جائیں گے۔ انہوں نے امریکا کے ساتھ مذاکرات کی حمایت کرنے والوں کو دشمن کے “ایجنٹ” قرار دیا اور کہا کہ ایسے لوگوں کا ایران کے ساتھ کوئی تعلق نہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں