ضمانت کی مدت ختم؛ نواز شریف جیل کی جانب روانہ

لاہور: سابق وزیر اعظم اور مسلم لیگ (ن) نواز شریف ضمانت کی مدت ختم ہونے کے بعد دوبارہ کوٹ لکھپت جیل جانے کے لیے روانہ ہوگئے ہیں۔

نواز شریف قافلے کی صورت میں جاتی امرا سے کوٹ لکھ پت جیل کی جانب رواں دواں ہیں، ان کے ہمراہ ان کی صاحبزادی مریم نواز ہیں جب کہ ان کی گاڑی حمزہ شہباز چلارہے ہیں۔

نواز شریف کے قافلے میں مسلم لیگ (ن) کے اہم رہنماؤں کے علاوہ کارکنوں کی بڑی تعداد موجود ہے۔

نواز شریف نے جیل جانے سے قبل اپنے اہل خانہ اور سیاسی رفقا کے ہمراہ افطار کیا، اس سلسلے میں جاتی امرا میں نواز شریف کی پسندیدہ کھانے تیار کئے گئے، افطار کے دسترخوان پر کھجوریں، پلاؤ، سفید چاول اور قورمہ خصوصی طور پر رکھا گیا۔

نواز شریف کا سامان جیل پہنچادیا گیا ہے جب کہ وہ قافلے کی صورت میں جیل پہنچیں گے ، ان کے ہمراہ مریم نواز کے علاوہ اہل خانہ اور پارٹی رہنما اور کارکن بھی ہوں گے، جو مختلف مقامات پر پارٹی رہنماؤں کی جانب سے لگائے گئے کیمپوں میں مختصر خطاب کریں گے۔

دوسری جانب مقررہ وقت گزرنے کے بعد کوٹ لکھپت جیل کا لاک اپ بند کر دیا گیا، نواز شریف کو نیا قیدی نمبر بھی آلاٹ نہ ہو سکا، جس کے بعد جیل انتظامیہ اب پنجاب حکومت یا ہوم سیکرٹری کی طرف سے ملنے والے خصوصی احکامات تک نواز شریف کو اب جیل قید کے لیے وصول نہیں کرے گی۔

جاتی امرا کے باہر میڈیا سے بات کرتے ہوئے خواجہ آصف نے کہا کہ عمران خان تباہی کے راستے پر ہیں، انہیں اگر یہ منظور ہے تو چلتے رہیں، نواز شریف کے بیانیے میں کوئی تبدیلی نہیں آئی، اب بھی نواز شریف ووٹ کو عزت دو کے نعرے پر قائم ہیں۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریف کو جیل عملہ لینے کے لیے آیا ہے تو کیا ہوا ہم اپنے وقت کے مطابق ہی کوٹ لکھپیت جیل جائیں گے، قانون کے مطابق نواز شریف آج رات بارہ بجے سے پہلے کسی بھی وقت جا سکتے ہیں۔

واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے 26 مارچ کو نواز شریف کی طبی بنیادوں پر 6 ہفتوں کے لیے عبوری ضمانت منظور کی تھی، جس کے بعد سابق وزیر اعظم کی ضمانت کی مدت 7 مئی کو ختم ہوگئی۔

اشتہار


اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں