ہواوے نے اپنا آپریٹنگ سسٹم HarmonyOS متعارف کروادیا

اسمارٹ موبائل تیار کرنے والی دنیا کی تیسری بڑی اور چین کی سب سے بڑی کمپنی ’ہواوے‘ نے امریکی اور گوگل پابندیوں کے بعد اپنا آپریٹنگ سسٹم متعارف کرادیا۔

ہواوے نے رواں برس مئی میں تصدیق کی تھی کہ اس نے امریکی اور گوگل کی پابندیوں کے بعد اپنے سسٹم بنانے کے کام کو تیز کردیا ہے اور آئندہ 2 سال تک اپنے سسٹم کو متعارف کرایا جائے گا۔

ہواوے پر رواں برس مئی میں سب سے پہلے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے پابندی لگائی تھی.

ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے پابندی کے بعد گوگل نے بھی کمپنی پر پابندیاں عائد کرتے ہوئے اسے اپنے اینڈرائڈ سسٹم سے محروم کرنے کا عندیہ دیا تھا۔

امریکی صدر نے ہواوے پر چین کی خفیہ ایجنسیوں کو امریکی صارفین کا ڈیٹا فراہم کرنے اور جاسوسی کے الزامات کے تحت بلیک لسٹ کیا تھا۔

امریکا کی جانب سے پابندیاں عائد کیے جانے کے بعد برطانیہ نے بھی ہواوے پر پابندیاں عائد کی تھیں۔

ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے کمپنی کو بلیک لسٹ کیے جانے کے کچھ ہی دن بعد امریکا نے چینی کمپنی کو ریلیف دے دیا تھا۔

اشتہار


اپنا تبصرہ بھیجیں